12

173سال بعدبھی درست وقت بتانے والا گھڑیال

موبائل فون نے جہاں کئی دوسری اشیا کو ختم کیا وہیں گھڑیوں کو بھی تاریخ کا حصہ بنا دیا اور اب گھڑیاں زیادہ تر شادی بیاہ کی تقریبات میں ہی نظر آتی ہے۔

جب گھڑیاں عام نہیں تھیں اس وقت عوام اونچے میناروں اور چوراہوں میں نصب گھڑیال کا استعمال کرتے تھے۔ بریگیڈئیر جنرل  جیکب کے  نام پر بسائے گئے جیک آباد میں173 سال پرانہ گھڑیال آج بھی بالکل درست وقت بتاتا ہے۔

بریگیڈئیر جنرل  جیکب فوجی افسرہونے کے ساتھ ساتھ انجینیئر بھی تھے اور یہ انوکھا گھڑیال ان کا ہی بنایا ہوا ہے۔ یہ دنیا کا واحد گھڑیال ہے  جس کے تمام پرزے پیتل کے بنے ہوئے ہیں۔ اس کی  اور خاص بات یہ ہے کہ کشش ثقل کی مدد سے چلنے والا دینا بھر میں واحد کلاک ہے۔

گھڑیال میں ایک ہزار کلو وزنی پنڈولم لگایا گیا ہے۔ اسے چلانے کیلئے مہینے میں دو مرتبہ چابی دی جاتی ہے۔

جان جیکب نے مقامی آبادی میں سے ایک خاندان کے افراد کو کلاک کی صفائی، مرمت اور چابی بھرنے کی ٹریننگ دینے کے لیے منتخب کیا تھا۔ اس خاندان کے افراد چار نسلوں سےاس گھڑیال کی دیکھ بھال کا فریضہ انجام دے رہے ہیں۔

گھڑیال کی دیکھ بحال کرنے والے ملازم جہانگیر علی دایو نے ہم نیوز کو بتایا کہ ان کا خاندان نسلوں سے اس گھڑیال کی دیکھ بھال کر رہا ہے۔

یہ لکڑی کے ایک باکس میں ڈپٹی کمشنر کی رہائش گاہ میں نصب ہے جو کبھی جان جیکب کی رہائش گاہ ہوا کرتی تھی۔ اس گھڑیال میں اسلامی تاریخ، چاند کا سائز، برطانوی اور مقامی وقت بھی موجود ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں