18

کسانوں کی حمایت میں انا ہزارے نے بھوک ہڑتال کا اعلان کردیا

نئی دہلی: بھارت کےممتاز سماجی کارکن انا ہزارے نے مودی سرکار کو خبردار کیا ہے کہ اگر اس نے کسانوں کے مطالبات تسلیم نہ کیے تو وہ احتجاجاً بھوک ہڑتال شروع کردیں گے۔

فیس بک، بی جے پی اور آر ایس ایس کے کنٹرول میں ہے: راہول گاندھی

ہم نیوز نے بھارتی خبر رساں ایجنسی کے حوالے سے بتایا ہے کہ انا ہزارے نے یہ بات وزیر زراعت کے نام لکھے جانے والے خط میں کہی ہے۔

بھارت میں انتہا پسند جنونی ہندوؤں کی جماعت بی جے پی کی حکومت نے جو زرعی قوانین متعارف کرائے ہیں ان کے خلاف کسانوں نے گزشتہ 19 دنوں سے دارالحکومت نئی دہلی کی سڑکوں پر احتجاج جاری رکھا ہوا ہے۔

بھارت: کرپشن بے نقاب کرنے پر صحافی کو زندہ جلا دیا گیا

بھارت میں احتجاج کرنے والے کسانوں نے آج بھوک ہڑتال کی لیکن وہ اس لحاظ سے بیکار گئی کہ اس کے بعد بھی مرکزی حکومت کی جانب سے بات چیت کا تاحال کوئی پیغام نہیں آیا ہے جب کہ اس سے قبل ہونے والے مذاکرات کے چھ ادوار بے نتیجہ بھی ثابت ہوچکے ہیں۔

ذرائع ابلاغ کے مطابق دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے احتجاجی کسانوں سے اظہار یکجہتی کے لیے بھوک ہڑتال میں شرکت کی ہے۔

فیس بک کا دوہرا معیار: بھارتی بجرنگ دل کے حوالے سے نرم رویہ

بھارتی ذرائع ابلاغ کے مطابق وزیراعلیٰ کی جانب سے کسانوں کی حمایت پر بی جے پی کی خواتین نے اروند کیجریوال کی رہائش گاہ کے باہر توڑ پھوڑ کی ہے۔ احتجاج کے دوران ان کی رہائش گاہ کے باہر لگے ہوئے سی سی ٹی وی کیمرے بھی توڑ دیے گئے ہیں۔

بھارتی خبر رساں ایجنسی کے مطابق مشہور سماجی کارکن انا ہزارے نے اپنے تحریر کردہ خط میں کہا ہے کہ اگر متنازع قوانین کو واپس نہیں لیا گیا تو وہ مرکز کے خلاف بھوک ہڑتال شروع کردیں گے۔

بھارتی حکومت عالمی نظام کے استحکام کیلئے خطرہ بن چکی ہے، وزیراعظم

افسوسناک امر ہے کہ ایک ایسے وقت میں جب بھارت میں کسانوں کی بڑی تعداد کچھ قوانین کے خلاف احتجاج کررہی ہے تو مدھیہ پردیش کے وزیر زراعت کمل پٹیل نے اپنے بیان کے ذریعے جلتی پر تیل کا کام کیا ہے۔

بھارتی ذرائع ابلاغ کے مطابق انہوں نے مظاہرین کو غدار تنظیم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ تحریک چلانے والی کسان تنظیم غداراورغیر ملکی طاقتوں کے اشارے پر پلنے والی ہیں۔

بھارت کی پاکستان کیخلاف فالس فلیگ آپریشن کی منصوبہ بندی کا انکشاف

مدھیہ پردیش کے وزیر زراعت کمل پٹیل نے اپنے بیان میں غیر پارلیمانی الفاظ کا استعمال کرتے ہوئے کہا ہے کہ اچانک پانچ سو تنظیمیں سانپ، بچھو اور نیولے کی طرح پنپ گئی ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ یہ سب ہی غدارہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں