18

جاپان کی مقامی عدالت کا ہم جنس پرست شہریوں کے حق میں فیصلہ

میڈیا رپورٹس کے مطابق ٹوکیوکی ساپورو کی ڈسٹرکٹ کورٹ نے  بدھ کے روز ایک مقدمے میں ایک ہی صنف سے تعلق رکھنے والے شہریوں کی شادیوں پر عائد قانونی پابندی غیر آئینی ہے۔

جرمن نشریاتی ادارے ڈی ڈبلیو کے مطابق جاپان کی عدالت نے متعدد درخواست دہندگان کی یہ درخواست مسترد کر دی کہ حکومت انہیں زر تلافی ادا کرے۔

جاپان کی عدالت کا یہ فیصلہ ہم جنس پرست افراد کے لیے مساوی سماجی اور قانونی حقوق کی جدوجہد میں ایک بڑی کامیابی قرار دیا جا رہا ہے۔ اس عدالتی فیصلے کا اثر ملک میں زیر سماعت ایسے ہی کئی دیگر مقدمات پر بھی پڑے گا۔

ڈی ڈبلیو کے مطابق عدالتی فیصلے کے مطابق کسی انسان کے جنسی رجحانات بھی اس کی نسل یا صنف کی طرح کوئی ایسی بات نہیں ہوتے، جس کا اس نے اپنے لیے ذاتی ترجیحی بنیادوں پر انتخاب کیا ہو۔ اس لیے ہم جنس پرست افراد کی آپس میں شادیوں کو قانوناﹰ تسلیم نا کرنے اور انہیں دیگر روایتی شادی شدہ جوڑوں کی طرح سماجی یا مالی مراعات سے محروم رکھنا ملکی آئین کے منافی ہے۔

عدالتی فیصلے کی دستاویز کے مطابق، ”شادی کی صورت میں ملنے والی قانونی سہولیات اور مراعات ہم جنس پرست جوڑوں کو بھی اسی طرح ملنا چاہییں، جس طرح وہ مردوں اور عورتوں پر مشتمل روایتی شادی شدہ جوڑوں کو ملتی ہیں۔‘‘

ڈی ڈبلیو کے مطابق اپنے اس فیصلے کی وجہ بیان کرتے ہوئے جج توموکو تاکےبے نے کہا کہ ہم جنس پرست افراد کو آپس میں شادیاں کرنے کی قانونی اجازت نا دینا یا ایسی شادیوں کو قانوناﹰ تسلیم نا کرنا ملکی آئین کی شق نمبر چودہ کی نفی کرتا ہے۔ جاپانی آئین کے اس آرٹیکل کی رو سے کسی بھی شہری کے ساتھ اس کی ‘نسل، رنگت، صنف، سماجی حیثیت یا خاندانی پس منظر‘ کی بنیاد پر امتیازی برتاؤ نہیں کیا جا سکتا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں